ترکی میں تین ہزار سال قبل قدیم قلعہ دریافت…یہ کتنا خوبصورت ہے آپ بھی دیکھیے

وان جھیل ترکی کی سب سے بڑی اور مشرق وسطیٰ کی دوسری بڑی جھیل ہے جو وین اور بطلس صوبوں کے درمیان گزرتی ہے۔تقریباً 6 ہزار سال سے موجود وان جھیل کی موجودہ گہرائی ارارتو تہذیب سے کئی سو میٹر زیادہ ہے۔ترکی کی سب سے بڑی وان جھیل سے تین ہزار سال قبل قدیم قلعہ دریافت ہوا ہے۔زیر زمین دریافت ہونے والا قلعہ اْرارتو تہذیب سے تعلق رکھتا ہے۔.ماہرین آثار قدیمہ نے ترکی کے صوبے وان میں واقع جھیل سے اْرارتو تہذیب سے تعلق رکھنے والے قلعے کی باقیات دریافت کی ہیں. جو تقریباً تین ہزار سال پرانی ہیں.

ان یوزونسو یِل یونیورسٹی اور بطلس صوبے کی انتظامیہ نے انکشاف کیا ہے کہ زیر زمین دریافت ہونے والا قلعہ اْرارتو تہذیب سے تعلق رکھتا ہے۔آٹھویں یا ساتویں صدی قبل مسیح اس تہذیب کو سلطنت وان کے نام سے بھی جانا جاتا تھا۔قلعہ دریافت کرنے والی ٹیم کے سربراہ کا کہنا ے کہ اْرارتو تہذیب کے وقت لوگوں نے جھیل کے اطراف بڑے گاؤں اور گھر تعمیر کر رکھے تھے کیونکہ اس وقت پانی کا لیول بہت کم تھا لیکن جیسے جیسے پانی کا لیول بڑھتا گیا تو لوگوں کو وہ علاقہ چھوڑنا پڑا۔یاد رہے کہ وان جھیل ترکی کی سب سے بڑی اور مشرق وسطیٰ کی دوسری بڑی جھیل ہے.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *