اب سردی اور زکام سے نہ ہوں پریشان اس سے بچاؤ اب اتنا آسان

انسان کا مدافعتی نظام ہی نقصان دہ اور بیمار کرنے والے جراثیم سے بچاتا ہے جوبیماریوں کو جسم پر حاوی نہیں ہونے دیتا البتہ مدافعتی نظام کی بھی ایک حد ہے اور جب زیادہ طاقتور جراثیم ہم پر حملہ کرتے ہیں تو مدافعتی نظام کمزور ہوجاتا ہے اور اس سے ہم بیمار ہوجاتے ہیں اس صورت میں اینٹی بائیوٹک اور ویکسین استعمال کرتے ہیں جس سے مدافعتی نظام کو جراثیم کے خلاف لڑنے کے لیے پھر سے تیار کیاجاتا ہے۔دوائیاں اور ویکسین جہاں انسان کو فائدہ پہنچاتی ہیں وہیں نقصان بھی پہنچاتی ہیں البتہ یہاں قدرتی اجزا سے بھرپور مشروبات سے متعلق بتایا گیا ہے کیونکہ قدرتی مشروبات میں بہت سے ایسے اجزا موجود ہوتے ہیں جن کو استعمال کرنے سے سردی، ٹھنڈ اور نزلے کے اثرات سے بچاجاسکتا ہے۔

سیب، گاجراور موسمی کا جوس:

یہ قدرتی مرکب کئی وٹامنز پر مشتمل ہوتا ہے۔ مثلاً وٹامن بی 6، وٹامن اے اور سی کے علاوہ پوٹاشیئم اور فولک ایسیڈ جو سردیوں سے متعلق امراض جیسے نزلہ، زکام اور فلو سے بچاتا ہے۔

ٹماٹر:

عام طور پر سبزی کے طور پراستعمال ہونےو الا پھل ٹماٹر تقریباً تمام لوگوں کا پسندیدہ ہے۔ ٹماٹر کا جوس موسم سرما میں خاص فائدہ پہنچاتاہے کیونکہ یہ فولک ایسیڈ، فولاد اور وٹامن اے اور سی سے بھرپور ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ جسم کی قوت مدافعت کو مضبوط بناتاہے۔

ٹماٹر، سلاد کے پتوں اور بند گوبھی کا جوس:

ٹماٹر، سلاد کے پتوں اور بند گوبھی کے جوس میں کئی مفید عناصر موجود ہوتے ہیں جن میں میگنیشئم ، پوٹاشئیم، فولاد ، فیٹی ایسیڈ اور وٹامن سی شامل ہیں۔ یہ جوس مدافعتی نظام کو مضبوط بناتاہے اور اسے انفیکشنز جیسے امراض کو روکنے کے خلاف مزاحمت کرنے کے قابل بناتا ہے۔

چقندر، گاجر، ادرک اور ہلدی کا جوس:

ان چاروں سبزیوں کا جوس سردیوں میں بے حد مفید ہےکیونکہ اس میں فولاد، کیلشئیم، فولک ایسیڈ، وٹامن سی اور ای ہوتے ہیں جو فلو، ٹھنڈ، کھانسی، جسم میں درد اور گٹھیا سے متعلق جوڑوں کے درد کوکم کرتا ہے۔

تربوز کا شربت:

تربوز کا شربت انسان کے مدافعتی نظام کو ٹھیک طرح کام کرنے میں معاون ثابت ہوتاہے۔ یہ پٹھوں کے درد میں کمی لاتا ہے اور تھکن کا احساس کم کرتا ہے بالخصوص زیادہ عمر کے لوگوں کو فلو سے بچاتاہے۔

کیوی، اسٹرابیری اور پودینے کا جوس:

کیوی، اسٹرابیری اور پودینے کا جوس میگنیشئیم ، زنک، فولک ایسیڈکے علاوہ وٹامن سی ، اے اور بی 6 سے بھرا ہوتا ہے اور مدافعتی نظام کو مضبوط بناتاہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *