چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال کی زیرصدارت اجلاس ، نیب کے آپریشن ڈویژن کی کارگردگی کا جائزہ لیا گیا.

قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین جسٹس جاوید اقبال نے نیب ہیڈکوارٹرز میں ایک اجلاس کی صدارت کی۔ اجلاس میں نیب کے آپریشن ڈویژن کی کارکردگی خصوصاً آپریشنل حکمت عملی کا جائزہ لیا گیا۔ چیئرمین نیب نے ہدایت کی کہ مبینہ ملزم اور گواہ کو نیب میں بلاتے وقت کال اپ نوٹس میں اس بات کو واضح الفاظ میں درج کیا جانا چاہئے کہ نیب کے قانون کے تحت آپ کو مبینہ ملزم کے طور پر بلایا جا رہا ہے یا گواہ کے طور پر اور اگر مبینہ ملزم کے طور پر بلایا جائے تو ملزم کے خلاف متعلقہ کیس اور الزامات کی تفصیلات واضح الفاظ میں تحریر کی جائیں، جو قانون کے مطابق ہر ملزم کا بنیادی حق ہوتا ہے کہ اس پر مبینہ الزامات کی تفصیلات سے اس کو آگاہ کیا جائے۔

اس کے علاوہ اگر کسی کو گواہ کے طور پر نیب میں بلایا جائے تو کال اپ نوٹس میں واضح طور پر تحریر کیا جائے کہ آپ کو نیب کے قانون کے تحت متعلقہ کیس میں گواہ کے طور پر بلایا جا رہا ہے جس میں آپ کے پاس متعلقہ کیس کے متعلق معلومات ہیں جو کہ متعلقہ ملزم کو قانون کے مطابق سزا دلوانے میں مددگار ثابت ہو سکتی ہیں۔ چیئرمین نیب نے ہدایت کی کہ نیب میں آنے والے ہر ملزم اور گواہ کی عزت نفس کا خیال رکھا جائے اور جو وقت دیا جائے اس پر متعلقہ گواہ اور مبینہ ملزم کا بیان ریکارڈ کیا جائے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *