ہالی ووڈ میں کسی بھی لڑکی کے جسم کی یہ چیز دیکھنے کے بعد ہی کام ملتا ہے . پریانکا چوپڑا نے ایسا انکشاف کر دیا کہ کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا

ہندوستانی فلموں کی مشہور اداکارہ اور ہالی ووڈ فلموں میں بھی اپنی فنکارانہ صلاحیتوں سے جگہ بنانے والی پریانکا چوپڑا نے کہا ہے کہ ہا لی ووڈ میں ایک فلم میکر نے مجھے میرے ’’جسمانی رنگ ‘‘کی وجہ سے کام دینے سے انکار کر دیا تھا جس نے مجھے یہاں بھی پھیلی نسل پرستی نے بہت حیران کیا تھا۔
ایک بھارتی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے پریانکا چوپڑا نے ہالی ووڈ میں اپنے تجربات کے حوالے سے تفصیلی گفتگو کی ۔میزبان نے ان سے سوال کیا کہ آپ بھارت کی مشہور اداکارہ ہیں اب گذشتہ کچھ عرصہ سے آپ ہالی ووڈ میں بھی اپنی فنکارانہ صلاحیتوں کے جوہر دکھا رہی ہیں ہالی ووڈ میں آپ کے ساتھ روا رکھا جانے والا سلوک کیسا ہے ؟ اس سوال پر پریانکا نے ٹھنڈی سانس لیتے ہوئے جواب دیا اور بتایا کہ ہالی ووڈ میں بھی نسل پرستی نے اپنے پنجے کیسے گاڑھے ہوئے ہیں ؟ ایک بار میں وہاں ایک فلم کے لئے باہر گئی ہوئی تھی تو کسی فلم میکر نے میرے ایجنٹ کو کال کی اور کہا کہ وہ (پریانکا) مناسب نہیں ہیں. اس کی وجہ کافی حیران کن تھی. میں نے جب اپنے ایجنٹ سے کام نہ دینے کی وجہ جاننی چاہی تو میرے ایجنٹ نے کہا کہ ’’میرا خیال ہے کہ اس فلم میکر کا مطلب یہ تھا کہ ان کو کسی ایسی اداکارہ کی ضرورت تھی جس کی سکن براؤن نہ ہو. ہالی ووڈ میں پھیلے ہوئے اس نسل پرستی کے رویے نے مجھے کافی پریشان کیا ۔
واضح رہے کہ پریانکا چوپڑاجلد ہی امریکی شو’’ کوانٹیکو‘‘ میں نظر آئیں گی. شو کا نیا سیزن رواں ماہ 26 اپریل کو سامنے آئے گا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *