سپریم کورٹ نے نواز شریف اور جہانگیر ترین کو تاحیات نا اہل ، 62 ون ایف فیصلہ

سپریم کورٹ نے اہم ترین کیس 62 ون ایف کا متفقہ فیصلہ سنا دیا ہے جس کے مطابق اس آرٹیکل کے تحت تاحیات نا اہلی ہو گی ۔ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد سابق وزیر اعظم نواز شریف اور تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کی نا اہلی تا حیات ہو گی. جسٹس عمر عطا بندیا ل نے فیصلہ پڑھ کر سنا یا اور کہا آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت عوامی نمائندوں کو صادق اور امین ہونا چاہیے. اس آرٹیکل پر پورا نہ اترنے والے کو آئین تا حیات نا اہل قرار دیتا ہے . جب تک عدالتی ڈیکلریشن موجود ہے. نااہلی رہے گی ۔ سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بینچ نے یہ فیصلہ متفقہ طور پر سنا یا ۔ جسٹس عمر عطا بندیال نے فیصلہ لکھا اور جسٹس شیخ عظمت سعید نے اضافی نوٹ لکھا ۔

سپریم کورٹ آف پاکستان کی جانب سے فیصلے میں کہا گیا ہے کہ 62 ون ایف شامل کرنے کا مقصد قوم کے لیے با کردار قیادت دینا ہے۔ آئینِ پاکستان کا آرٹیکل 62 (1) ایف کہتا ہے کہ ’’ کوئی بھی شخص مجلسِ شوریٰ (پارلیمنٹ) کا ممبر بننے کے لیے انتخابات میں حصہ لینے یا منتخب ہونے کا اہل نہیں ہوسکتا جب تک کہ وہ دانش مند، صادق‘ میانہ رو، ایماندار اور امین نہ ہو‘‘۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *