عالمی مذاہب کاتحقیقی مطالعہ. تحریر۔۔۔۔محمداسامہ قاسم

ممبر:۔اسلامک رائٹرزموومنٹ پاکستان
حق کی پہچان اوراسکی حقیقی اتباع تبھی ہوسکتی ہے جب باطل عقایداورکفریہ نظریات سے بھی کچھ ناکچھ شناسای ہو۔
اسلام ایک آفاقی مذہب ہے جوخداوندقدوس کے نزدیک مقبول ومحبوب ہے.
دینی وقرآنی علوم کی تدریس وترویج توہردورمیں بہتراندازمیں جاری رہی ہے مگراسلام کے معاصرومنحرف مذاھب کاعلم اوردلیل کی بنیادپرانکے تقابلی جایزے کی داستان مختلف ادوارمیں عروج وزوال کاشکاررہی ہے۔
ہماری برصغیرکی تاریخ میں مولاناقاسم نانوتویؒ اورمولانارحمت اللہ کیرانوی ؒ اس قافلہ فکروشعور کے روح رواں تسلیم کیے جاتے ہیں مگران اکابرین کے بعدہمارے معاشریمیں اسلام کے مختلف طبقات فکرکے مابین نہ ختم ہونے والا مناظرے اورتقابل کاماحول روز بروز بڑھتا جارہاہے مگراسلام کے معاصر مذاھب ہندومت یہودیت عیسایت اوراسلام سے منحرف نظریات کے تحقیقی مطالعہ سے ہماری بحثیت قوم دلچسپی روزبروزکم ہورہی ہیجبکہ ان مذاہب کے تقابلی مطالعہ سے اسلام کی صداقت واضح ہوتی ہیان نظریات کے ادراک سے اپنے مسلک کی فوقیت ثابت ہوجاتی ہے۔
موجودہ دورمیں مفکراسلام مولانااہدالراشدی(سرپرست اعلیٰ اسلامک رائٹرزموومنٹ پاکستان) اورعلامہ عبدالروف فاروقی صاحب اس میدان میں گراں قدرخدمات سرانجام دے رہے ہیں یہ دونوں شخصیات مذاہب عالم کے مطالعہ کے شعورکے ساتھ ساتھ امت مسلمہ میں اسلام کی حقیقی سوچ منتقل کرتے ہوے فکری محاذ کے بھی روح رواں ہیں۔
شیخ زاہدالراشدی صاحب کی سرپرستی میں علامہ فاروقی صاحب کی محنت وکاوش سے مرکزتحقیق اسلامی کامونکی میں مسلسل کئی سالوں سے وقتافوقتا مطالعہ مذاہب کے نام سے شارٹ کورسز کرواے جاتے رہے ہیں۔
جسکے اغراض و مقاصدمیں سب سے اہم بات ہی ہے کہ مسلمانوں میں مطالعہ مذاہب کے ذریعے اسلام کی حقانیت کاشعورپیداکرناانہیں اعتقادی وفکری ارتدادسے بچانااوربین المذاہب مکالمہ میں اسلام کی نما۶ندگی کیلے علمی بنیادوں پرباصلاحیت افرادتیارکرنا اوراسکے ساتھ ساتھ غیرمسلموں کوقرآن وسننت کے حکیمانہ اصولوں کی روشنی میں دعوت وتبلیغ کاطریقہ کاراوراسلام پروارداعتراضات کاتحقیقی جواب دیاجاتاہے۔
اس سال یہ پانچ روزہ مطالعہ مذاہب کورس 29 مئی سے 3اپریل تک مرکزتحقیق اسلامی میں کروایاگیا جس میں ملک کے جید وممتازعلماء کرام اورپروفیسرحضرات نے تمام عالمی مذاہب پہ پرمغز اسباق پڑھائے بالخصوص علامہ عبد الرؤف فاروقی اور مولانازاہدالراشدی (سرپرست اعلیٰ اسلامک رائٹرزموومنٹ پاکستان) اورمولانامفتی مغیرہ صاحب نے بڑے سہل اندازمیں اس خشک عنوان کوشرکاے کورس کے سامنے بیان کیا کورس کے چوتھے روزالشریعہ اکیڈمی گجرانوالہ کے وفدکیساتھ تمام شرکائے کورس کومسیحیت کے سب سے بڑے ریسرچ تھے مکتبہ عنا ویم پاکستان کے کانفرنس حال میں طلباء کے استقبال میں زبردست تقریب کااہتمام کیاگیاتھاجس میں وہاں کی ڈائریکٹر نے مذہب عیسایت کاتعارف اوراپنے ادارے کی کارکردگی کے بارے میں گفتگوکی اسکے بعدعلامہ فاروقی صاحب نے اسلام اورمسیحیت کے قدیم تعلق وروابط پراظہارخیال کیا مکتبہ عناویم کی طرف سے علامہ فاروقی صاحب کو اعزازی طورپرتحائف پیش کیے گے۔
مطالعہ مذاہب کورس میں میں نظم الاوقات کے مطابق مولاناعمارخان ناصر مولانافہیم الحسن تھانوی سیدفرندعلی(روزنامہ اسلام لاہور) مولاناغلام مرتضی پروفیسرڈاکٹرمجاہدمقصود اورمحترم جناب متین خالد صاحب نے اہم لیکچرزدئیے جس میں خاص طورپرعالمی مذاہب کااجمالی خاکہ ہندومت کاتعارف اورانکی اصلاحی تحریکیں ،یہودیت کی تاریخ اورانکامذہبی ادب ،مسیحیت کے عقائدونظریات اورمسیحی فرقوں کاتعارف اورقادیانیت کی حقیقت کے عنوانات کے ساتھ اوربھی مختلف موضوعات سیرحاصل گفتگوکی گئی۔
کورس کے انتظامی امور کے ذمہ دارمولانااسامہ حقانی صاحب تھے 3اپریل بروزجمعرات کورس کی اختتامی تقریب میں مولانافضل الرحیم اشرفی علامہ زاہدالراشدی (سرپرست اعلیٰ اسلامک رائٹرزموومنٹ پاکستان)ڈاکٹرطاہررضابخاری اورڈاکٹرسرفرازاعوان صاحب نے شرکت کی شرکاے کورس میں سے مولاناابوبکرعبداللہ اورشیخ محمدفرقان نے اپنے تاثرات پیش کئے تقریب کے اختتام پرشرکاے کورس کو سرٹیفکیٹ اورکتب دی گیں راقم کو اس کورس میں شرکت کرنے سے علامہ فاروقی کی ذات اورانکی توجہات سے استفادہ کے ساتھ ساتھ انکی تڑپ اورافکاروترجیحات کاخوب ادراک ہوا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *