کالمز

جےآئی ٹی رپورٹ ، چور مچائے شور(سید انور محمود)

مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) نے چھ مئی کو کام شروع کیا، دو ماہ کے عرصے میں جے آئی ٹی کے 59 اجلاس منعقد ہوئے اور اس دوران اس نے وزیراعظم پاکستان نواز شریف اور ان کے اہلخانہ سمیت 23 افراد سے تفتیش کی۔ 10 جولائی کو جے آئی ٹی نے10 والمن پر مشتمل

جے آئی ٹی بننے پر مٹھائیاں بانٹنے والے

عراقی سفیر نے انکشاف کیا ہے کہ عراق میں داعش کو شکست دینے میں پاکستانی انٹیلی جنس نے بہت اہم کردار ادا کیا ہے ان کی طرف سے یہ آئی ایس آئی کو خراج تحسین ہے ایک طرف جہاں دوسرے ممالک ایجینسی کی کارکردگی کو سراہ رہے ہیں اور اس کو دنیا کی نمبر ون

پھر تصویریں سونے نہیں دیتیں

آج دل پھرسے مضطرب ہے بے قراری،بے سکونی حواس پر طاری ہے میرے چاروں اطراف فضا میں خون کی بو رچی ہوئی محسوس ہورہی ہے جیسے سانس لینا بھی دوبھرہوگیاہو میرے ارد گرد آہوں،سسکیوں اور بین کرتی آوازیں حا وی ہوتی جارہی ہیں میں خوفزدہ ہوں ذرا سی آہٹ پر بھی سہم سہم جاتاہوں کبھی

پاکستانی احتساب

پاکستان میں حقیقی معنوں میں کبھی احتساب ہی نہیں ہوا اگر ایسا ہوتا تو پاکستانی سیاست سے کرپٹ عناصر کا صفایا ہوجاتا۔پاکستانی احتساب بااثر لوگ صرف اپنے مقاصد کے لئے استعمال کرتے ہیں اور ایسا عرصہ دراز سے چل رہا ہے،پاکستانی حکومتیں ہمیشہ ان باثر لوگوں کے زیر اثر رہی ہیں۔یہی وجہ ہے کہ پاکستان

ابھی انصاف ہونا باقی ہے

پاکستان میں انصاف انکے لئے ہے جو سرکاری اور سیاسی اثر رسوخ رکھتے ہیں ، جو سرکاری محکموں میں اعلی عہدوں پر فائز ہیں ، جن کے پاس تعلقات ہیں جن کے پاس مال و دولت ہے۔پاکستان میں ایک عام آدمی محنت ، مشقت اور گالیاں کھانے کیلئے پیدا ہوتا ہے یا پھر ان سے

مائینس پی ایس 114

پی ایس 114 سندھ اسمبلی کی وہ نشست ہے جو کافی عرصہ سے متنازع رہی ہے 2013 کے الیکشن میں اس حلقے سے مسلم لیگ نون کے عرفان اللہ مروت 37130 ووٹ لے کر کامیاب قرار پائے تھے جبکہ ایم کیو ایم کے عبدلرؤف صدیقی 30305 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر تھے لیکن ایم

استعفے کا سوام ہے بابا

جس کا شدت سے انتظار تھا بالآخر وہ انتظار بھی ختم ہوا چونکہ پانا ما پیپرز لیکس کی تحقیقات پر مامورسُپریم کورٹ کی قا ئم کردہ جے آئی ٹی اپنا کام مکمل کرچکنے کے بعد اپنی رپورٹ سُپر یم کورٹ کو پیش کرنے کے بعد تحلیل ہوچکی ہے ،جبکہ یہ بڑی حیرت اور حیران کُن

ضمنی انتخابات میں الطاف حسین کی کامیابی

لندن جہاں بانی ایم کیو ایم الطاف حسین 25 سال سے زیادہ عرصہ سے مقیم ہیں اور اب پاکستان میں اردو بولنے والوں (مہاجروں) کے دشمن بنے ہوئے ہیں، 22 اگست 2016 کو وہ پاکستان، پاکستانی اداروں اور اداروں کے سربراہوں کے خلاف زہر اگل چکے ہیں، الطاف حسین ہوں یا کوئی اور جو بھی

ایہہ جنگل دی پنچایت اے ایتھے منصف نیں بگھیاڑ

وہ جو کہتے ہیں نا کہ ہم نے ملک کے لئے قربانیاں دیں۔ ہم نے جمہوریت کی خاطر خون دیا۔ ہم نے ملک کی خاطر جلاوطنی کاٹی ۔ ہمیں جلاوطنی کے دنوں میں باپ کا جنازہ بھی نہ پڑھنے دیا گیا۔ ہم نے یہ کر دیا ہم نے وہ توپ چلا دی۔ ہم نہ ہوتے

پاکستان میں شہید بننا مشکل کب تھا ..احمر اکبر

پاکستان دنیا کا واحد ایسا ملک ہے جہاں شہداء کی تعداد پوری دنیا کے شہداء کی تعداد سے زیادہ ہے آپ پوچھیں گے کیوں ؟ تو اس کا جواب حاضر ہے پاکستان میں ایک سیاسی جماعت ایسی بھی ہے جس کے کارکنان سڑیٹ کرائم ،بھتہ وصولی اور دیگر سنگین وارداتوں میں ملوث ہونے کے بعد