آپ کیا لیں گے سر؟

آپ کیا لیں گے سر؟
اندھا آدمی: میں اندھا ہوں،آپ مجھے اپنے کچن سے،چمچہ کوکھانے کی اشیاء میں ڈبوکر لا دیں،میں اسے سو نگھ کر،آرڈر کر دوں گا!
منیجر کو یہ سن کربڑی حیرانی ہوئی،اس نے دل ھی دل میں سوچا کہ،کوئی آدمی سونگھ کر کیسے بتا سکتا ھے کہ ہم نے آ ج کیا بنایا ہے،کیا پکایا ہے!
منیجر نے جتنی بار بھی،اپنے الگ الگ کھانے کی اشیاء میں،چمچہ ڈبوکر،اندھے آدمی کو سنگھایا، اندھے نے صحیح بتایا کہ وہ کیا ھے، اور
نے سونگھ کر ھی کھانے کا آرڈرکیا
ہفتے بھر یہی چلتا رھا ۔اندھا سونگھ کر،آرڈردیتا اورکھانا کھا کرچلا جاتا!ا
یک دن منیجر نے،اندھے آدمی کی امتحان لینے کی سوچی ۔منیجر کچن میں گیا اوراپنی بیوی حنا سے بولا کہ،تم چمچہ کواپنے ہونٹوں سے گیلا کر دو!
حنا نے چائے کے چمچے کواپنے ہونٹوں پررگڑکر منیجر کو دے دیا۔منیجر نے وہ چائے کا چمچہ اندھے آدمی کو لے جا کردیااور بولا،بتاو آج ہم نے کیا بنایا ھے؟اندھے آدمی نے چمچہ کو سونگھااوربولا:اوہ مائی گاڈ،میری کلاس میٹ حنا یہاں کام کرتی ہے۔
منیجربیہوش۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *